آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعہ6؍ ربیع الثانی 1440ھ 14؍دسمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
کراچی(ٹی وی رپورٹ)سینئر تجزیہ کاروں نے کہا ہے کہ نواز شریف سیاسی تاریخ کے سب سے بڑے خودکش بمبار ہیں،اسٹیڈیم میں دس لاکھ افراد بھی بیٹھے ہوں آؤٹ کا فیصلہ امپائر نے کرناہوتا ہے،نواز شریف کی بغاوت سے مراد سکہ شاہی سے انحراف ہے،نواز شریف دوبارہ وزیراعظم بننے اور ممکنہ سزاؤں سے بچنے کیلئے بغاوت کی بات کررہے ہیں،سینیٹ انتخابات میں سب سے بڑا سیاسی دھچکا ایم کیوا یم کو لگا ہے،لوگ اب سینیٹ کو سپرمارکیٹ کے طور پر دیکھتے ہیں جہاں ضمیروں کی خرید و فروخت ہوتی ہے،چیئرمین سینیٹ کیلئے رضا ربانی سے بہتر آپشن نہیں ہے،حکومت نہ پورے ملک میں جمعہ کے خطبات کی نگرانی کرسکتی ہے اورنہ ہی کرنی چاہئے۔ان خیالات کا اظہار امتیاز عالم، حفیظ اللہ نیازی، حسن نثار، ارشاد بھٹی، مظہر عباس اورشہزاد چوہدری نے جیو نیوز کے پروگرام ”رپورٹ کارڈ“ میں میزبان ابصاء کومل سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ میزبان کے پہلے سوال اب عوام سکہ شاہی برداشت کرنے کو تیار نہیں،اب وہ بغاوت کررہے ہیں اور بغاوت کرنی بھی چاہئے،نواز شریف، جمہوری دور حکومت میں سابق وزیراعظم کی بغاوت سے کیا مراد ہے؟ کا جواب دیتے ہوئے حسن نثار نے کہا کہ تین بار وزیراعظم رہنے والے نواز شریف ذہنی توازن کھوچکے ہیں،اسٹیڈیم میں دس لاکھ افراد بھی بیٹھے ہوں آؤٹ کا فیصلہ امپائر نے

کرنا ہوتا ہے،نواز شریف بری طرح گھائل آدمی ہے جو کھلے عام ریاست اور ریاستی اداروں کو پیغام دے رہا ہے کہ اگر میں بچ گیا تو تم میں سے کوئی نہیں بچے گا،نواز شریف سیاسی تاریخ کے سب سے بڑے خودکش بمبار ہیں،نواز شریف ہوسِ اقتدار کی آخری حد پر کھڑا آدمی ہے، نواز شریف عوام کو اکسانے کی کوشش کررہا ہے مگر کامیاب نہیں ہوگا۔حفیظ اللہ نیازی نے کہا کہ عوام نے نواز شریف کا بیانیہ قبول کرلیا ہے جسے وہ انجوائے کررہے ہیں،ن لیگ کے امیدوار سے شیر کا الیکشن کا نشان لے لیا گیا،نواز شریف کی بغاوت سے مراد سکہ شاہی سے انحراف ہے۔ارشاد بھٹی کا کہنا تھا کہ نواز شریف کی بغاوت کا مقصد تاحیات اقتدار حاصل کرنا ہے،اس کیلئے نواز شریف کبھی انقلابی تو کبھی نظریاتی بن جاتے ہیں، پرانی کیسٹوں کی طرح نواز شریف کی کیسٹ بھی ایک جملہ پر پھنس گئی ہے، نواز شریف کی بغاوت اداروں کیخلاف بغاوت ہے،جو چند ادارے باقی رہ گئے ہیں انہیں وہ تہہ و بالا کرنا چاہتے ہیں۔امتیاز عالم نے کہا کہ نواز شریف کی اداروں اور طاقت کے مراکز سے اختیارات پر لڑائی ہے،نواز شریف تو خود موجودہ نظام کا حصہ ہیں،وہ بغاوت کر کے کون سا نظام لانا چاہتے ہیں،نواز شریف نے اگلے انتخابات کیلئے ایک بیانیہ اپنایا ہے جسے عوام نے پذیرائی دی ہے،نواز شریف کی بغاوت کی بات دراصل سیاسی بیان ہے۔شہزاد چوہدری کا کہنا تھا کہ نواز شریف کی بغاوت کا مقصد خالصتاً ذاتی ہے،وہ دوبارہ وزیراعظم بننے اور ممکنہ سزاؤں سے بچنے کیلئے بغاوت کی بات کررہے ہیں،نواز شریف کی بغاوت انہیں میسر طاقت سے جڑی ہوتی ہے،نواز شریف کی پہلی بغاوت سپریم کورٹ پر حملہ،دوسری بغاوت خود کوا میر المومنین بنانے کی کوشش کرنا اور تیسری بغاوت این آر او لے کر ملک سے باہر جاناہوتاہے۔مظہر عباس نے کہا کہ نواز شریف بغاوت کی بات کر کے’مجھے کیوں نکالا‘ کے بیانیے کو آگے بڑھارہے ہیں،نواز شریف سمجھتے ہیں کہ لوگوں کی بڑی تعداد ان کے بیانیے کو سپورٹ کررہی ہے۔دوسرے سوال سینیٹ انتخابات، سیاسی طورپر کس پارٹی کو سب سے بڑا جھٹکا لگا؟ کا جواب دیتے ہوئے مظہر عباس نے کہا کہ سینیٹ انتخابات میں سب سے بڑا سیاسی دھچکا ایم کیوا یم کو لگا ہے، ایم کیو ایم کا سیاسی سفر اب ختم ہوتا نظر آرہا ہے، سیاسی جماعتیں چاہیں تو ہارس ٹریڈنگ روک سکتی ہیں۔حسن نثار کا کہناتھا کہ سینیٹ انتخابات میں سب سے بڑا سیاسی دھچکا خود سینیٹ کو لگا ہے، لوگ اب سینیٹ کو سینیٹ سپرمارکیٹ کے طور پر دیکھتے ہیں جہاں عوامی نمائندوں کے دعویداروں کے ضمیروں کی خرید و فروخت ہوتی ہے۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں