آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعہ 9؍صفر المظفّر 1440ھ 19؍اکتوبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
کراچی (اسٹاف رپورٹر) متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے سربراہ ڈاکٹر محمد فاروق ستار نے کہا ہے کہ سینٹ کے انتخابات میں بدترین ہارس ٹریڈنگ ہوئی ہے ،ہماری تحقیقات کے مطابق ہمارے 15سے زائد ارکان اسمبلی کو خریدا گیا اور انہیں مجبور کرکے وفاداری تبدیل کروائی گئی،ہم اس سینٹ کے الیکشن کو نہیں مانتے اور اسے چیلنج کرنے کیلئے الیکشن کمیشن اور عدالت جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم کو 2018ءکے انتخابات میں ختم کرنے اور مہاجروں کا مینڈیٹ تحریک انصاف، پیپلز پارٹی اور پاک سر زمین پارٹی میں تقسیم کرنے کی سازش کی جارہی ہے۔وہ پیر کویہاں پی آئی بی کالونی میں رابطہ کمیٹی، اور اراکین قومی و صوبائی اسمبلی کے ہمراہ پریس کانفرنس کررہے تھے۔ ڈاکٹرفاروق ستار نے کہا کہ سندھ میں ہونے والے سینیٹ کے انتخابات میں بدترین ہارس ٹریڈنگ کی گئی، اس مرتبہ سندھ کو بھی بلوچستان بنادیا گیا،جو دھاندلی ہوئی اسے سندھ اسمبلی کے خفیہ کیمروں کے ذریعے دیکھا جاسکتا تھا۔ انہوں نے کہا کہ 5مارچ کو بہادرآباد والوں کے ساتھ فارمولا طے ہونا تھا، جسے تمام ثالثوں نے مانا تھا، لیکن بہادرآباد والوں نے مجھ سے اس سلسلے میں کوئی رابطہ نہیں کیا اور میں سارا دن ان کا انتظار کرتا رہا، یہ فارمولا ایڈہاک بنیادوں پر رابطہ کمیٹی کا قیام تھا، جسے میں نے اور

ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے 20رکنی رابطہ کمیٹی بناکر مکمل کرنا تھا، آج میں اس لئے یہ ساری باتیں کارکنوں کے سامنے رکھ رہا ہوں کہ کل کوئی میرا گریبان نہ پکڑے ، یہ تاثر دینے کی کوشش کی جارہی ہے کہ اصل اختلاف کامران ٹیسوری کی وجہ سے ہے اور میں نے انا کا مسئلہ بنا رکھا ہے، جبکہ حقیقت کچھ اور ہے۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں