آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعہ6؍ ربیع الثانی 1440ھ 14؍دسمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

نو منتخب سینیٹرز سعدیہ خاقان عباسی ،نزہت صادق اور ہارون اختر غیر ملکی شہریت سے دستبردار ہو چکے ہیں

اسلام آباد (صالح ظافر) حکمران جماعت مسلم لیگ (ن) سے تعلق رکھنے والی نو منتخب سینیٹرز سعدیہ خاقان عباسی اور نزہت صادق سینیٹ انتخابات میں حصہ لینے سے قبل اپنی امریکی شہریت سے دستبردار ہوگئی ہیں۔ سعدیہ خاقان عباسی وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی بہن ہیں اور انہوں نے گزشتہ ماہ کاغذات نامزدگی داخل کرنے سے فوراً پہلے اپنی غیر ملکی شہریت چھوڑ دی۔ اسی طرح مسلم لیگ (ن) کے نو منتخب سینیٹر ہارون اختر کے پاس بھی دہری شہریت نہیں ہے کیونکہ انہوں نے 2011ء میں اپنی کینیڈین شہریت چھوڑ دی تھی۔ وہ اس وقت وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے ریونیو ہیں اور ان کا درجہ وفاقی وزیر کا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان نے ان کی دستاویزات کی اسکروٹنی کی ہے اور اس کے بعد ہی انہیں الیکشن لڑنے کی اجازت ملی اور یہی وجہ ہے کہ ان کے کاغذات نامزدگی اور الیکشن میں کوئی چیز غلط نہیں۔ دوسری جانب دی نیوز سے بات چیت کرتے ہوئے نزہت صادق جو سینیٹ کی موجودہ رکن بھی ہیں، کا کہنا ہے کہ جس دن انہیں یہ اطلاع ملی کہ انہیں سینیٹ کیلئے ٹکٹ دیا جا رہا ہے؛ اسی دن وہ پارٹی قیادت کی ہدایت پر امریکی سفارت خانے گئیں اور فوری طور پر امریکی شہریت ختم کرنے کی درخواست دائر کی۔ انہوں نے امریکی شہریت اسلئے حاصل کی تھی کیونکہ ان کے بچے وہاں زیر تعلیم ہیں۔

انہوں نے کہا کہ مقررہ فیس کی ادائیگی اور امریکی شہریت کے خاتمے کی سند کی وصولی کے فوراً بعد وہ لاہور پہنچیں جہاں انہوں نے کاغذات نامزدگی آخری دن دائر کیے۔ انہوں نے کہا کہ ان کے کاغذات نامزدگی کو پی ٹی آئی کے امیدوار نے چیلنج کیا تھا لیکن ریٹرننگ افسر نے اعتراضات کو مسترد کر دیا۔ بعد میں انہی بنیادوں پر کاغذات نامزدگی منظور کیے جانے کو لاہور ہائی کورٹ کے جج پر مشتمل الیکشن ٹریبونل میں چیلنج کیا گیا لیکن یہاں بھی درخواست مسترد کی گئی۔ سعدیہ عباسی کا کہنا تھا کہ پیر کی شام انہیں یہ سن کر حیرت ہوئی کہ چیف جسٹس پاکستان نے سنی سنائی بات پر از خود نوٹس لیا اور ان کا نوٹیفکیشن روکنے کی ہدایت جاری کی۔ سعدیہ عباسی خود ایک بیریسٹر ہیں اور ان سے درجنوں وکلاء نے جمعرات کو سپریم کورٹ میں پیشی کے دوران معاونت کیلئے رابطہ کیا ہے۔ انہوں نے وکلاء کا شکریہ ادا کیا اور انہیں تحمل سے کام لینے کا مشورہ دیا۔ سعدیہ عباسی کا کہنا ہے کہ وہ ممکنہ طور پر چیئرمین سینیٹ کے عہدے کیلئے بھی لڑ سکتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ 8؍ مارچ کو سپریم کورٹ میں اپنا مقدمہ لڑیں گی لیکن وہ منگل کو متعلقہ دستاویزات کے ساتھ عدالت میں پیش ہوں گی اور درخواست کریں گی کہ نوٹیفکیشن کے متعلق جاری کردہ حکم نامہ واپس لیا جائے۔ اسی دوران چیئرمین سیکریٹریٹ کے ذرائع نے دی نیوز کو بتایا ہے کہ موجودہ سینیٹر نزہت صادق اپنی 6؍ سالہ رکنیت کی مدت اتوار کو مکمل کر رہی ہیں اور انہیں ایک مرتبہ پھر 6؍ سال کیلئے منتخب کیا گیا ہے، انہوں نے 2012ء میں سینیٹ کا الیکشن لڑنے سے قبل ہی اپنی امریکی شہریت ختم کی تھی۔ وہ بھی جمعرات کو عدالت میں پیش ہوں گی۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں