آپ آف لائن ہیں
بدھ5؍شوال المکرم 1439ھ 20؍جون2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
لندن (پی اے)تھریسامے نے کہا کہ ایسے نوجوان جن کے پاس فیملی دولت نہیں ہے اور وہ اپنے لئے گھر نہیں خرید سکتے تو ان کی ناراضی اور غصہ درست ہے۔ پلاننگ رولز میں اصلاحات کا اعلان کرتے ہوئے برطانوی وزیراعظم تھریسامے نے اعلان کیا کہ جن نوجوانوں کے پاس ماں باپ کے بنک اکائونٹس کی سپورٹ نہیں ہے ان کے لئے گھروں کی اونرشپ حاصل کرنا ممکن نہیں ہے۔ اس تغاوت کا سبب سماجی عدم مساوات ہے اور یہ تقسیم جنریشنز میں منتقل ہورہی ہے۔ انگلینڈ میں بلڈرز سے کہا گیا ہے کہ اگر وہ زمین پر تعیمرات نہیں کریں گے اور اسے صرف اپنے پاس رکھیں گے تو انہیں پلاننگ پرمیشن نہیں ملےگی۔ وزیراعظم نے انگلینڈ میں اپنی شدید ڈومیسٹک ترجیحات میں ہائوس بلڈنگ کی سطح میں اضافے پر زور دیا ہے۔ لیبر نے منسٹرز پر سخت الزامات لگائے اور کہا کہ انہوں نے معمولی ایکشن لیا ہے۔ نیشنل پلاننگ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے تھریسامے نے کہا کہ بے تحاشہ لوگ ہائوسنگ مارکیٹ سے باہر ہیں انہوں نے جزوی طور پر اس کا مورودالزام ڈیولپرز کو ٹھہرایا، کنسٹرکشن سیکٹر میں گزشتہ سال پرمیشن کے بعد بونسز کو اجاگر کیا گیا کہ 140سٹاف500ملین پونڈ کا بونس پول شیئر کرے گا جبکہ اس کا چیف ایگزیکٹیو 110ملین کے پے آئوٹ کیلئے لائن میں ہے جسے بعد میں انویسٹرز کے شور شرابے پر کم کرکے 25ملین پونڈ

x
Advertisement

کردیا گیا۔ تاہم فرم نے پے آئوٹ کا دفاع کیا اور کہا کہ یہ کامیابی کا انعام ہے۔ ناقدین کا کہنا ہے کہ 2013ء کے بعد فرم کے شیئر پرائسس تین گنا ہوگئے جس کا ایک حصہ ہیلپ ٹو بائی سکیم کے ذریعے نئے گھروں کے لئے حکومتی سبسڈیز ہیں۔ تھریسامے نے بھی بونسز کو ہدف تنقید بنایا اور کہا کہ یہ بونسز تعمیر کردہ گھروں کی تعداد پر نہیں بلکہ منافع یا شیئر پرائس پر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مارکیٹ میں جہاں کم سپلائی کی وجہ سے زیادہ نرخ ہوتے ہیں اور اس صورت حال کی وجہ سے ہماری ضرورت کے مطابق گھروں کی تعمیر کی حوصلہ افزائی نہیں ہوئی۔ 2010ء کے بعد سے انگلینڈ میں پلاننگ پرمیشن کی تعداد میں اضافہ ہوا۔ وزیراعظم نے کہا کہ تعمیر کئے جانے والے گھروں کی بڑھتی ہوئی تعداد سے مماثلت نہیں رکھتی۔ انہوں نے کہا کہ انگلینڈ میں پلاننگ رولز کو دوبارہ تحریر کرنے کی ضرورت ہے اور اس کے ساتھ انہیں سادہ بنایا جائے تاکہ ڈیولپمنٹ کے لئے زمین کو آگے بڑھانے میں آسانی ہو اور فاسٹ ٹریک اپروولز ہوں۔ انہوں نے کہا کہ کونسلز کو فرمز کے ماضی کے ڈیولپمنٹ ریکارڈز کو غور کرنے کی اجازت دی جانی چاہئے تاکہ پروجیکٹس کی منظوری کے وقت اس کو دیکھا جاسکے۔انہوں نے کہا کہ میری خواہش ہے کہ پلاننگ پرمیشنز ان لوگوں کو ملنی چاہئیں جو گھرتعمیر کرنا چاہتے ہوں، نہ کہ ان لوگوں کو ملے جو زمینوں کو لے کر بیٹھ جائیں اور قدر بڑھنے کا انتظار کریں۔ میں توقع کرتی ہوں کہ برطانیہ میں ڈیولپرز اپنی ذمے داری پوری کریں گے اور ملکی ضروریات کے مطابق مکانات تعمیر کریں گے۔ تھریسامے نے اپنی اس خوشی کا ذکر بھی کیا جب انہوں نے اور ان کے شوہر نے اپنا پہلا گھر خریدا تھا۔ انہوں نے کہا کہ اس کے ساتھ ہی انہیں احساس تحفظ ہوا انہوں نے کہا کہ گھروں کی طلب اور سپلائی میں بڑے فرق کی وجہ سے پوری ایک جنریشن کا ہوم اونرشپ کا خواب پورا ہوتا دکھائی نہیں دے رہا۔ انہوں نے کہا کہ جن نوجوانوں کے پاس ماں باپ کے بنک نہیں ہیں وہ اپنا پہلا گھر خریدنے کی سکت نہیں رکھتے جس پر ان کا اشتعال اور ناراضی بجا ہے۔ اگر آپ اس طرح کے خوش قسمت نہیں تو پھرآپ پر ہوم اونرشپ کے دروازے بند ہیں۔ کمیونٹیز سیکرٹری ساجد جاوید نے بی بی سی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہم ہائوسنگ کو ہر ایک کے لئے مناسب ایفورڈیبل بنائیں گے اور زیادہ گھر تعمیر کریں گے۔ گزشتہ برس کے ہائوسنگ وائٹ پیپر میں تقریباً 80تجاویز دی گئی تھیں جن پر اب عملدرآمد ہوگا جس میں یہ بھی شامل ہوگا کہ کونسلز نئے ملک گیر سٹینڈرڈکو اپناسکیں گی جس میں دیکھا جاسکے گا کہ ان کے ایریا میں کتنے گھروں کی پلاننگ کرنے کی ضرورت ہے۔ تھریسامے نے کہاکہ گرین بیلٹ کے ساتھ ٹیم اپ ہونا برطانیہ کے ہائوسنگ کرائسس کا جواب نہیں اور موجودہ پروٹیکشنز کو برقرار رکھا جائیگا اور بعض کیسز میں ان کو مستحکم کیا جائیگا۔ کونسلز صرف اس صورت میں گرین بیلٹ بائونڈریز میں ترمیم کرسکیں گی جب یہ مکمل طور پر ایکسپلور کرلیں گی کہ انہوں نے اپنی کمیونٹی ضروریات کے لئے گھروں کی تعمیر کے خاطرخواہ دیگر آپشنز کا جائزہ لے لیا ہے۔ لیبرپارٹی کا کہنا ہے کہ برطانیہ میں ہائوسنگ کرائسس سے نمٹنے کے لئے انقلابی اقدامات کی ضرورت ہے۔ 2010ء کے بعد 30سال میں سب سے کم اونرشپ تناسب ہے۔ لوکل گورنمنٹ ایسوسی ایشن نے کہا کہ کونسلز 10میں سے 9مجوزہ ڈیولپمنٹس کی منظوری دے رہی ہیں لیکن 420000سے زائد گھر پرمیشن کے بعد تعمیرات کے منتظر ہیں۔ چیئرلارڈ پورٹر نے کہا کہ کوئی بھی صرف پلاننگ پرمیشن پر نہیں رہ سکتا۔ ڈیولپرز ضروری انفراسٹرکچر کے ساتھ ایفورڈایبل مکانات تعمیر کریں، کونسلز کو ان حوالوں سے زیادہ اختیارات ملنے چاہئیں جہاں گھروں کی تعمیر پرمیشن کے باوجود رکی ہوئی ہو۔ سکاٹ لینڈ اور ویلز میں ہائوسنگ پالیسی کو ڈیوالو کردیا گیا ہے۔ سکاٹش حکومت کا کہنا ہے کہ 2021ء تک 50000نئے ایفورڈایبل گھر تعمیر کئے جائیں گے جبکہ ویلش حکومت نے گزشتہ ہفتے دو سکیمز شروع کی ہیں جن کے ذریعے زیادہ سے زیادہ لوگوں کو ہائوسنگ ملکیت کی سیڑھی پر چڑھایا جائیگا۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں