آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
منگل6؍ صفر المظفّر 1440ھ16؍اکتوبر 2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

سمندر میں آئل اسپل ایکسپرٹیز کیلئے جامع منصوبہ بندی ضروری ہے، چیئرمین کے پی ٹی

کراچی(اسٹاف رپورٹر) کراچی پورٹ ٹرسٹ کے چیئر مین ریئر ایڈمرل جمیل اختر نے کہا ہے کہ آئل اسپل ایکسپرٹیز کے لئے جامع منصوبہ بندی کی ضرورت ہے ،کیوں کہ سمندری ذرائع سے آئل کی درآمدات و برآمدات دنیا بھر میں کی جاتی ہیں، اس طرح اس کے مضر اثرات میں کمی لائی جاسکتی ہے اگر صحیح وقت پر درست اقدامات عمل میں لائے جائیں اور اسکے لئے ملکوں، اداروں اور انڈسٹریز کے درمیان کو آپریشن کی فضا قائم کی جانی ضروری ہے، یہ بات انہوں نے کراچی پورٹ ٹرسٹ کی جانب سے پاکستانی سمندر میں آئل اسپل ایمرجنسی کے حوالے سے تیاری اور عملی مظاہرے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی ، انہوں نے 7 دہائیوں کی کاوشوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ ہمارا مقصد ایک جامع آئل اسپل ایکسپرٹیز کا حصول رہا ہے تاکہ صاف و شفاف سمندر شپنگ انڈسٹری کو میسر آئیں، انہوں نے کہا کہ آئل اسپل کبھی بھی ہو سکتی ہے کیوں کہ سمندری ذرائع سے آئل کی درآمدات و برآمداتدنیا بھر میں کی جاتی ہیں، کے پی ٹی میں میرین پلوشن ڈیپارٹمنٹ قائم کرکے پچھلی 2 دہائی سے زائد عرصے میں آئل اسپل ریسپانس اور اسکی تیاریوں کے حوالے کام کیا گیا ہے جو کہ آئل اسپل کنٹنجنسی پلان کی موجب بنی ہے، اس پلان کو مختلف اوقات میں آئل اور شپنگ انڈسٹری کے ساتھ بیٹھ کر اپ ڈیٹ کیا جاتا ہے،انہوں نے مزید تفصیلات

بتاتے ہوئے کہا کہ آج کی ورکشاپ میں پہلے اور دوسرے آئی ایم او لیول کے تحت آئل اسپل ریسپانس کی ٹیکنالوجی اور ایکویپمنٹ کو استعمال کیا جائے گا جس سے ایک ایسا پلیٹ فارم مہیا کیا جائے گا جس سے اسٹیک ہولڈرز اپنی استعدادی صلاحیتوں کو فروغ دے سکیں گے اور کسی بھی موقع پر وقوع پزیر ہونے والی آئل اسپل کی روک تھام کر سکیں گے، انہوں نے کہا کہ اس طرح سے ایک جامع اسٹرٹیجی یا پلان بنا یا جائے گا اور یہ ملکی اور بیروں ملک ہونے والی آئل ہینڈلنگ کی جانچ کے ذریعے ممکن بنایا جائے گا،اور آئی ایم او کی OPRC-90 کنوینشن سے موازنہ کیا جائے گا جو کہ کنٹینجنسی پلاننگ ، ایکویپمنٹ کے اسٹاک جن کے ذریعے آئل پلوشن کی روک تھام ممکن بنائی جاسکے، ریسرچ اینڈ ڈیولپمنٹ، ٹریننگ ، وغیرہ وغیرہ پر مبی ہے، انہوں نے کہا کہ جب تسمان اسپرٹ کا حادثہ ہو تھا اس وقت ہم تیار نہ تھے لیکن بعد ازاں ہم نے نہ صرف آئل اسپل ایکویپمنٹ کے حصول کو ممکن بنایا بلکہ آئل اسپل حادثوں سے نبرد آزما ہونے کے لئے اپنی استعداد میں بھی اضافہ کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم نے نیشنل میرین ڈیزاسٹر کنٹینجینسی پلان 2007 بنایا اور 8 نیشنل لیول ایکسرسائزز کی ہیں لیکن مزید بہتری کی گنجائش باقی ہے، تقریب سے ریئر ایڈمرل (ر) پرویز اصغر اور ڈاکٹر ثمینہ قدوائی نے بھی خطاب کیا ۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں